ArticlesNEWS/REPORTS/PROGRAMMESNRC/CAB/CAA/NPR

NPR Boycott Movement BY Raza Academy

موجودہ فارمیٹ میں این پی آر منظور نہیں ، ریاستی حکومت 2010/11 کے مطابق مردم شماری کا فیصلہ کرے

موجودہ فارمیٹ میں این پی آر منظور نہیں ، ریاستی حکومت 2010/11 کے مطابق مردم شماری کا فیصلہ کرے

 

حج ٹریننگ سینٹر میں رضا اکیڈمی کی تحریک پر منعقدہ میٹنگ میں تمام مسلک سے وابستہ علما اور دانشوران شہر کا مطالبہ 
مہاراشٹر کے وزیر اعلیٰ  ادھو ٹھاکرے سے ملاقات کا فیصلہ 
مالیگاؤں /
اعلان کے مطابق رضا اکیڈمی کی تحریک پر مالیگاوں شہر میں اپن پی آر کے متعلق متفقہ فیصلہ لینے اور مشترکہ اقدام کے مقصد کے تحت ایک انتہائی اہم میٹنگ کا انعقاد حج ٹریننگ سینٹر میں کیا گیا، الحاج قاری زین العابدین رضوی کی صدارت میں منعقدہ اس میٹنگ میں تمام مسلک سے وابستہ علما اور اہم شخصیات نے شرکت کی ، میٹنگ کا آغاز تلاوت قرآن کریم سے ہوا، حمد اور نعت پاک کے بعد پروگرام کے اغراض و مقاصد پیش کرتے ہوئے رضا اکیڈمی کے رضوی سلیم شہزاد نے این پی آر کے حوالے سے ملکی حالات کا جائزہ پیش کیا اور کہا کہ شہر سمیت ریاست اور ملک بھر کے مسلمان خصوصی طور پر جبکہ عمومی طور پر ہر پچھڑی جات جماعت اور طبقات میں این پی آر کو لے کر تشویش کا ماحول ہے. ایسے حالات میں ہماری چھوٹی سی کوشش ہے کہ کم از کم مالیگاؤں شہر کی سطح پر تمام سیاسی، سماجی، مذہبی اور تعلیمی عمائدین اور سرکردہ افراد ایک رائے ہوجائیں تاکہ عوامی بے چینی کا خاتمہ ہوسکے. آپ نے حاضرین سے گزارش کی کہ این پی آر سے متعلق اختلاف رائے کی صورت میں احترامِ رائے ہم پر لازم ہے.
اس موقع پر سنی جمیعۃ الاسلام کے صدر اور کل جماعتی تنظیم کے ترجمان صوفی غلام رسول قادری نے کہا کہ پورا ملک سراپا احتجاج ہے، این پی آر کا بائیکاٹ پوری طاقت سے ہونا چاہیے، اس طرح کا فیصلہ آج کی اس اہم نشست میں ہونا چاہئے اور اس کا اعلان نماز جمعہ سے قبل شہر کی تمام مساجد سے بھی ہونا چاہیے ، موصوف نے کہا کہ یہ وقت بیدار رہنے اور لوگوں کو بیدار کرنے کا ہے ، رضا اکیڈمی نے موقع کی نزاکت کو محسوس کرتے ہوئے جو قدم اٹھایا، وہ قابل تعریف ہے ،
دارالعلوم غوث اعظم کے بانی حافظ ساجد حسین اشرفی نے اپنے خیالات پیش کرتے ہوئے رضا اکیڈمی کے اس بروقت اقدام کی سراہنا کی اور کہا کہ این پی آر کا سامنا کرنے کے لیے ایسے ہی اتحاد کی ضرورت ہے ،
مقامی جماعت اسلامی کے امیر عبدالعظیم فلاحی نے اپنی بات رکھتے ہوئے این پی آر کے خلاف منصوبہ بند عوامی بیداری کی ضرورت پر زور دیا، انہوں نے نئے این پی آر فارمیٹ کی مخالفت کی لیکن یہ بھی کہا کہ کاغذات درست کروانے کی کارروائی ہونا چاہیے ۔
مولانا فضل الرحمن محمدی (جمیعت اہل حدیث) نے کہا کہ ملک بھر میں شہریان کی تشویش بجا ہے، این پی آر نے مسلمانوں سمیت تمام طبقات کو مشکلات میں ڈال رکھا ہے، اس لئے اس عنوان پر محلہ وائز ٹیمیں تیار کی جانی چاہیے اور جو کچھ بھی تجویز یہاں منظور ہو اس پر عمل آوری کے لئے گھر گھر بیداری مہم چلانا چاہیے.
جنتادل کے بزرگ لیڈر حنیف صابر نے موجودہ این پی آر کی مخالفت پوری طاقت سے کئے جانے کی حمایت کی اور کہا کہ صوبائی و مرکزی حکومتوں تک اپنے مطالبات پہنچانا چاہیے اور انہیں بتانا چاہیے کہ موجودہ این پی آر کسی صورت قابل قبول نہیں ہے،
رسائٹ ٹو ڈے چینل کے روحِ رواں کاشف سمّن اور حفاظت گروپ کے عارف نوری نے مالیگاؤں میونسپل کمشنر سے ہوئی ملاقات اور این پی آر کے ضمن میں گفتگو کا خلاصہ سامعین کے روبرو پیش کیا. اور واضح کیا کہ مردم شماری اور قومی آبادی کا رجسٹر دو الگ الگ فارمیٹ ہیں. اس لئے ہمیں دونوں
فارمیٹ پر گفتگو کرنا چاہئے.

مشہور ادیب اور این آر سی گائیڈ نامی کتاب کے مصنف ڈاکٹر الیاس وسیم صدیقی نے اس موقع پر اعتدال کا راستہ اختیار کرنے کی رائے پیش کی اور کہا کہ موجودہ این پی آر فارمیٹ کے بائیکاٹ کا اعلان کرنے سے قبل ہمیں حکومتی سطح پر دباؤ بناتے ہوئے کوشش کرنا چاہیے کہ 2010 کے فارمیٹ کے مطابق سروے ہو. اگر اس کوشش میں ہم ناکام ہوتے ہیں تو پھر بائیکاٹ کے متعلق متفقہ طور پر کوئی فیصلہ لیا جا سکتا ہے ،
جمیعتہ علما ناسک کے صدر مولانا عبدالباری قاسمی شیخ الحدیث مدرسہ اسلامیہ نے اس موقع پر اپنی بات رکھتے ہوئے کہا کہ اگر متنازعہ کالم حکومت ہٹا دیتی ہے تو پرانے فارمیٹ پر ہمیں پہلے بھی آبجیکشن نہیں تھا اب بھی نہیں ہونا چاہیے
شہر کے معروف سیاست داں اور صنعت کار جمیل کرانتی نے اس میٹنگ میں سبھی مسلک سے وابستہ علما اور ذمہ داران شہر کی موجودگی امید کی ایک روشن کرن ہے، میں رضااکیڈمی کی اس کوشش کو قدر کی نگاہ سے دیتا ہوں ، موصوف نے کہا کہ ہمیں جو بھی فیصلہ کرنا ہو، وہ ہم  بے خوف ہوکر کریں اور پھر اس پر قائم رہیں ، اس موقع پر آپ نے شہر کے اہم سیاسی قائد اور بیباک رہنما ساتھی نہال احمد کو بھی یاد کیا ، اور ان کی مضبوط قوت ارادی کی تعریف کی، موصوف نے کہا کہ کسی طرح کی ڈُھل مُل پالیسی نہیں ہونا چاہیے اگر یہاں سے متفقہ طور پر بائیکاٹ کا فیصلہ ہوتو پھر اپنا مطالبہ پورے ہونے تک ہمیں اس پر ڈٹے رہنا چاہیے، پھر چاہے اس کے لیے جیل ہی کیوں نہ جانے پڑے
سنّی کونسل کے حاجی یوسف الیاس نے اپنی بات رکھتے ہوئے کہا کہ این پی آر کو ہلکے میں نہ لیا جائے، یہ چور راستہ ہے، اس لئے مسلمانوں کو اکیلے تحریک نہ چلاتے ہوئے غیر مسلم افراد، ادیباسی، دلت جیسے برادرانِ وطن کو بھی ساتھ لینا چاہیے، ہمارا احتجاج موجودہ این پی آر کے مکمل بائیکاٹ کا ہونا چاہیے اور پوری طاقت اور اتحاد کے ساتھ ہونا چاہیے. ، موصوف نے کہا کہ جمہوری ملک میں غیر جمہوری قوانین لانے والی مودی حکومت اس وقت بہت دباؤ میں ہے ، اگر ہم نے اتحاد و اتفاق کے ساتھ این پی آر کا بائیکاٹ کردیا تو اسے اپنا فیصلہ بدلنے پر مجبور ہونا پڑے گا،
سابق نائب مئیر اور مشہور صنعت کار جمیل سیٹھ زر والا نے اس موقع پر بیباکی سے اپنی رائے رکھتے ہوئے شہر کے سیاسی نمائندگان پر تنقید کی اور کہا کہ اس حساس موضوع پر رضا اکیڈمی نے جو پہل کی وہ قابل مبارکباد ہے، ہونا تو یہی چاہیے تھا کہ شہر کی مذہبی اور سیاسی قیادت، دانشوران شہر کے ساتھ مل بیٹھ کر اس نازک اور حساس مسئلہ پر متفقہ طور پر کوئی ٹھوس فیصلہ لیتی، اس کے لیے یہ بڑا بہتر موقع تھا ، لیکن سیاسی نمائندگان کی غفلت قابلِ افسوس ہے. انہیں سیاست سے ہی فرصت نہیں ہے ، اس موقع پر آپ نے علمائے اسلام کی قربانیوں کو یاد کرتے ہوئے کہا کہ آزادی کے قائد بھی علماء تھے اور آج این پی آر کے خلاف جو جدوجہد اور کوشش ہو رہی ہے اس کی قیادت  بھی علما ہی کر رہے ہیں. آپ نے کہا کہ اس مسئلہ پر غور و فکر کے بعد اتفاق رائے سے یہاں جو بھی فیصلہ ہو اس پر ہم سب سختی سے عمل کریں
رضا اکیڈمی کے شکیل احمد سبحانی نے کہا کہ یہ ایک بڑا مشکل فیصلہ تھا، جسے ملک کے موجودہ حالات کے تناظر میں ہم نے کافی غور وخوص کے بعد لیا ، موصوف نے تمام مسلک کے علما اور دانشوران شہر کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ این پی آر کے متعلق جو متفقہ فیصلہ یہاں ہوگا، رضا اکیڈمی اس فیصلے کی پرزور تائید وحمایت کرے گی ،

دارالعلوم محمدیہ کے ذمہ دار قاری طفیل احمد نے قوم و ملت کی بروقت رہنمائی پر رضا اکیڈمی کو مبارکباد دی اور این پی آر کے اضافی کالموں کی مخالفت کرتے ہوئے دیگر مقررین کی طرح مرحوم بزرگ رہنما ساتھی نہال احمد کو یاد کیا. اور اس نشست میں موجود عمائدینِ شہر کے فیصلوں سے ہر طرح کے اتفاق کا اظہار کیا.
نوجوان صحافی مختار عدیل نے این پی آر سے متعلق اس حساس نشست کی نظامت بھی کی اور زیر غور آنے والے نکات کی وضاحت بھی دورانِ گفتگو کرتے رہے. آپ نے مردم شماری اور قومی آبادی کے رجسٹر کی تاریخی حیثیت پر گفتگو بھی کی.
سابق صدر بلدیہ محترمہ ساجدہ نہال احمد نے صوبائی اور ملکی سیاسی صورتحال پر تبصرہ کرتے ہوئے مختلف حوالہ جات سے این پی آر کے مکمل بائیکاٹ کی تجویز رکھی اور کہا کہ وزیر داخلہ ہند کی زبانی یقین دہانیوں پر بالکل بھروسہ نہیں کیا جاسکتا. ان کی نیتوں میں خرابی ہے. اس لئے جب تک حکومتی سطح پر نوٹیفکیشن کی صورت میں کوئی بات سامنے نہیں آ جائے، اس وقت تک ہمیں اپنے احتجاج کو جاری رکھنا چاہیے ، محترمہ ساجدہ نہال احمد صاحبہ نے یہ بھی کہا کہ مردم شماری پر ہمیں کوئی اعتراض نہیں ہے لیکن این پی آر تو مکمل طور پر مشکوک ہے.
ماہر معاشیات پروفیسر عبدالمجید صدیقی نے اس نشست میں اپنی بات رکھتے ہوئے کہا کہ این پی آر کے متعلق اتفاق رائے سے یہاں جو بھی فیصلہ لیا جائے گا میں اور میری تنظیم سی سی آئی اس فیصلے کے ساتھ رہے گی ، لیکن کاغذات درستی کے کام کو روکا نہیں جانا چاہیے، آپ نے کہا کہ حکومت مہاراشٹر نے نئے کالموں کا جائزہ لینے کے لئے کمیٹی بنائی ہے تو ہمیں اس کمیٹی سے ملاقات کرکے حکومت تک اپنی بات رکھنا چاہیے اور اپنے مطالبات کو پوری طاقت سے منوانے کی کوشش کرنا چاہیے. آپ نے اپنے ادارہ سی سی آئی کی جانب سے رضا اکیڈمی کے اقدام کی سراہنا کی اور ہر تحریک پر ساتھ دینے کا وعدہ کیا.
مسجد تاج الشریعہ کے خطیب و امام حافظ انیس الرحمن رضوی نے بھی اس بات کی حمایت کی کہ پہلے حکومت پر دباؤ بناکر اپنے مطالبات منوانے کی کوشش ہو، ناکامی کی صورت میں عدم تعاؤن اور بائیکاٹ کا اعلان ہو.
کل جماعتی تنظیم اور راشٹریہ مسلم مورچہ کے قومی صدر مولانا عبدالحمید ازہری نے مختلف صوبوں میں جاری بامسیف کی اپنی تحریکی سرگرمیوں کے حوالے سے کہا کہ اس حکومت پر کسی بھی درجے میں بھروسہ نہیں کیا جاسکتا. اس لئے پوری طاقت کے ساتھ پورے ملک کے ادیباسی سماج، او بی سی، دلت اور سیکولر غیر مسلم افراد بھی این آر سی کے مکمل بائیکاٹ کا ذہن بنائے ہوئے ہیں. اس لئے اجتماعیت کا ساتھ لے کر ہمیں اس ناکارہ حکومت کو اس کے ارادوں میں ناکام بنانا چاہئے. اور این پی آر کا مکمل بائیکاٹ کیا جانا چاہیے.

ڈھائی گھنٹے تک مسلسل جاری رہنے والی اس میٹنگ میں 23 شرکاء نے این پی آر کے متعلق اپنی رائے پیش کی، ان تمام آراء کے پیش نظر جو تجویز تیار گئی، اسے ڈاکٹر الیاس صدیقی نے پڑھ کر سنایا،
تجویز :ہمارا مطالبہ یہ ہے کہ گذشتہ 2010 میں ہوئے این پی آر کے مقابل اس مرتبہ 2020 کے این پی آر فارمیٹ میں جو زائد کالمس بڑھائے گئے ہیں حکومت مہاراشٹر اور مرکزی حکومت ان زائد کالموں کو ختم کرے، یعنی 2010 کے فارمیٹ کے مطابق اگر این پی آر تیار کیا جاتا ہے تو ہم سیاسی، سماجی، مذہبی اور تعلیمی افراد عوام سے گزارش کریں گے کہ پرانے فارمیٹ کے مطابق این پی آر کا استقبال کیا جائے اور حکومتی ملازمین سے مکمل تعاؤن کریں، بصورت دیگر ہم خود کو مجبور پاتے ہیں کہ این پی آر کے تعلق سے عدم تعاؤن Non Co operation کا رویہ اپنائیں ……. ،
اس تجویز کے پیش ہونے کے بعد صوفی غلام رسول قادری، مولانا عبدالاحد ازہری، حاجی یوسف الیاس ، حاجی حنیف صابر اور کل جماعتی تنظیم کی جانب سے یہ کہا گیا کہ مکمل بائیکاٹ کا اعلان کرتے ہوئے حکومت پر دباؤ بنانا چاہیے، جبکہ ڈاکٹر الیاس صدیقی، جمیل سیٹھ زر والے، پروفیسر عبدالمجید صدیقی اور صدر میٹنگ قاری زین العابدین وغیرہ کی رائے یہ تھی کہ وزیر اعلیٰ مہاراشٹر نے خاص این پی آر کے مسئلے پر وزراء کی 6 رکنی کمیٹی بنائی ہے اس لیے پہلے اس کمیٹی کے اراکین اور وزیر اعلیٰ مہاراشٹر سے ملاقات کرتے ہوئے اپنا مطالبہ پیش کیا جائے، اور اگر مطالبات منظور نہیں ہوتے ہیں تو پھر بائیکاٹ کا اعلان کیا جائے ،
اس اختلاف رائے کی وجہ سے مذکورہ تجویز منظور نہیں کی جا سکی اور نا ہی تمام حاضرین کی دستخطوں کے ساتھ کوئی متفقہ اعلان جاری کیا جاسکا ، لیکن اس بات پر سبھی شرکاء نے اتفاق کیا کہ این پی آر کا موجودہ فارمیٹ ہمیں منظور نہیں، مہاراشٹر حکومت اسے واپس لے، اور 2010 کے فارمیٹ کے مطابق این پی آر کروایا جائے ، اسی طرح اس بات پر بھی اتفاق کیا گیا کہ ریاستی حکومت تک فوری طور پر اپنی گزارشات اور مطالبات کو پہنچایا جانا چاہیے اور ایک بڑے وفد کے ساتھ وزیراعلیٰ مہاراشٹر سے ملاقات کی کوشش بھی کرنا چاہیے ،  حافظ ساجد حسین اشرفی کی دعا پر خوشگوار ماحول میں اس عزم کے ساتھ اس میٹنگ کا اختتام ہوا کہ این پی آر کے خلاف ہماری یہ مشترکہ جدو جہد جاری رہے گی ، عبدالحلیم صدیقی نے اظہار تشکر کیا …..،
شرکا ئے میٹنگ،
صوفی غلام رسول قادری (سنی جمیعت الاسلام)، مولانا عبدالباری قاسمی(جمیعةالعلماءضلع ناسک)،میڈم ساجدہ نہال احمد (سابق صدر بلدیہ)، مولانا عبدالحمید ازھری(مسلم پرسنل لاء بورڈ )، حاجی محمدیوسف الیاس(سنی کونسل)،جمیل کرانتی، قاری زین العابدین(سنی جمیعةالعلماء) مولانا عبدالعظیم فلاحی(صدر جماعت اسلامی) ، شکیل احمد فیضی(جمیعت اہلحدیث )،حافظ اشفاق احمد محمدی(جمیعت اہلحدیث)، سمیع اللہ انصاری (مسلم لیگ )،جمیل سیٹھ زروالے،پروفیسر عبدالمجید صدیقی، ڈاکٹر الیاس صدیقی، عبدالحلیم صدیقی (سنیئر صحافی )،حافظ ساجد حسین اشرفی (دارالعلوم غوث اعظم )،محمد حنیف صابر (سیکریڑی ٹی ایم ہائی اسکول )حافظ انیس الرحمن رضوی ( خطیب و امام مسجد تاج الشریعہ) حافظ احسان رضا ( مسجد مولانا یونس مالیگ ) ، قاری طفیل احمد محمدی(دارالعلوم محمدیہ ) ، مختار عدیل ،(صحافی )،خلیل عباس (صحافی )،محمد عارف نوری (حفاظت گروپ )، محمد کاشف سمن (رسائد ٹو ڈے)،عطاء الرحمن نوری ( جرنلسٹ ) ، حافظ محمد اسماعیل اشرفی ،راحیل حنیف (انڈیا اگینس ہیٹ)، ندیم انجم چشتی، رضوان ربانی(ربانی چینل)، عمران راشد ،  (MAH ,MSO) ،خیال انصاری(مدیر خیر اندیش)، سہیل احمد ڈالریا، محمد مصطفی آفندی سر ، وسیم احمد رضوی،  محمد فاروق فردوسی ، محمد سلیم غازیانی(سابق کارپوریٹر)، حاجی ریاض عبداللہ (المدینہ ٹورس)، محمد آصف پارس گروپ، سلمان قاری ، وغیرہ ……  
رضا اکیڈمی کے صدیقی سلیم شہزاد ، غلام فرید ، امتیاز خورشید، حافظ شریف رضوی ، الطاف تابانی ، حاجی حامد رضوی ، ظہیر قریشی ، قاسم رضوی وغیرہ بھی اس موقع پر موجود تھے ،
( رپورٹنگ، امتیاز خورشید

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!