UGC NET URDUUrdu GhazalUrdu Nazm

خواجہ میر درد کے منتخب اشعار

Khawaja Meer Dard ki Shayeri

خواجہ میر درد کے منتخب اشعار

 

’’خواجہ میر دردؔ اُردو ادبیات میں صوفیانہ شاعری کے باوا آدم تھے۔‘‘

 

زندگی ہے یا کوئی طوفان ہے
ہم تو اس جینے کے ہاتھوں مرچلے

تر دامنی پہ شیخ ہماری نہ جائیو
دامن نچوڑ دیں تو فرشتے وضو کریں

مٹ جائیں ایک آن میں کثرت نمائیاں
ہم آئینے کے سامنے جب جا کے ہو کریں

جگ میں آکر ادھر ادھر دیکھا
تو ہی آیا نظر جدھر دیکھا

ارض و سما کہاں تیری وسعت کو پاسکے
میرا ہی دل ہے وہ کہ جہاں تو سما سکے

مدرسہ یا دیر تھا یا کعبہ یا بت خانہ تھا
ہم سبھی مہماں تھے تو آپ ہی صاحب خانہ تھا

جگ میں آکر ادھر ادھر دیکھا
تو ہی آیا نظر جدھر دیکھا

نے گل کو ہے ثبات نہ ہم کو ہے اعتبار
کس بات پہ چمن !ہوس و رنگ و بو کریں

زندگی ہے ،یا کوئی طوفان ہے
ہم تو، اس جینے کے ہاتھوں مر چلے

آواز نہیں قید میں زنجیر کی ہر گز
ہر چند کی عالم میں ہوں عالم سے جدا ہوں

رات محفل میں ترے حسن کے شعلے کے حضور
شمع کے منھ پہ جو دیکھا تو کہیں نور نہ تھا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Check Also
Close
Back to top button
Translate »
error: Content is protected !!