Maharashtra State Eligibility Test (MH-SET)UGC NET URDUUrdu Ghazal

کلیات ولی سے ردیف ’’ی‘‘ کی شامل نصاب غزلیں

Wali Deccani Ki Radeef Ya Ki Ghazlen

کلیات ولی سے ردیف ’’ی‘‘ کی شامل نصاب غزلیں

1

منگا کے پی کوں لکھوں میں اپس کی بے تابی
لیا نین کی سفیدی سوں کاغذآبی

لکھا پلک کے قلم سوں میں اے کماں ابرو
جگر کے خون سوں تجھ تیغ کی سیہ تابی

ہوا ہے جب سو ں وو نور نظر انکھاں سوں جدا
نہیں نظر میں مری تب سوں غیر بے خوابی

نگہ کے جھاڑ کا پھل تو ہے اے بہار کرم
ترے جمال کے گلشن میںنت ہے سیرابی

ولیؔ خیال میں اس مہ کوں جو کوئی کہ رکھے
تو خواب میں نہ دے اس کو غیر مہتابی

2

آیا وہ شوخ باندھ کے خنجر کمر ستی
عالم کوں قتل عام کیا اک نظر ستی

طاقت رہے نہ بات کی پھر انفعال سوں
تشبیہہ تجھ لباں کوں اگر دوں شکر ستی

غم نے لیا ہے تب سوں مجھے پیچ و تاب میں
باندھا ہے جب سوں جیوکوں اس مو کمر ستی

غم کے چمن کو باد خزاں کا نہیں ہے خوف
پہنچا ہے اس کوں آب مری چشم تر ستی

یک بار جا کے دیکھ ولیؔ اس دسن کے تئیں
لکھتا ہوں جس کے وصف کوں آب گہر ستی

3

اس سوں رکھتا ہوں خیالِ دوستی
جس کے چہرے پر ہے خال دوستی

خشک لب وو کیوں رہے عالم منیں
جس کو حاصل ہے زلال دوستی

شمع بزم اہل معنی کیوں نہ ہوئے
جس اُپر روشن ہے حال دوستی

اس سخن سوں آشنا ہے درد مند
درد ِدوری ہے وبال دوستی

اے سجن تجھ مکھ کے مصحف میں مجھے
دیکھنا بر جا ہے قال دوستی

فیض سوں تجھ قد کے اے رنگیں بہار
تازہ و تر ہے نہال دوستی

اے ولیؔ ہر آن کر مشک وفا
ہے وفاداری کمال دوستی

4

جوکُئی ہر رنگ میں اپنے کو شامل کر نئیں گنتے
ہمن سب عاقلاں میں اس کو ں عاقل کر نئیں گنتے

مدرس مدرسے میں گر نہ بولے درس درشن کا
تو اس کوں عاشقاں استاد کامل کر نئیں گنتے

خیال خام کوں جو کئی کہ دھووے صفحہ ٔ دل سوں
تصوف کے مطالب کوں وو مشکل کر نئیں گنتے

جو بسمل نئیں ہوا تیری نین کی تیغ سوں بسمل
شہیداں جگ کے اُس بسمل کوں بسمل کر نئیں گنتے

پرت کے پنتھ میں جو کئی سفر کرتے ہیں رات ہور دن
وو دنیا کوں بغیر از چاہ بابل کر نئیں گنتے

نہیں جس دل میں پی کی یاد کی گرمی کی بے تابی
تو ویسے دل کوں سارے دلبراںدل کر نئیں گنتے

رہے محروم تیری زلف کے مہرے سوں وو دائم
جوکُئی تیری نین کو ں زہر قاتل کر نئیں گنتے

نہ پاوے وو دنیا میں لذت دیوانگی ہر گز
جو تجھ زلفاں کے حلقے کوں سلاسل کر نئیں گنتے

بغیر از معرفت سب بات میں گر گئی اچھے کامل
ولیؔ سب اہل عرفاں اس کوں کامل کر نئیں گنتے

بزرگاں کن جو کئی آپس کوں ناداں کر نئیں گنتے
سخن کے آشنا اُن کوں سخن داں کر نئیں گنتے

طریقہ عشق بازاں کا عجب نادر طریقہ ہے
جو کئی عا شق نئیں اس کو ں مسلماں کر نئیں گنتے

گریباں جو ہوا نئیں چاک بے تابی کے ہاتھوں سوں
گلے کا دام ہے اس کوں گریباں کر نئیں گنتے

عجب کچھ بوجھ رکھتے ہیں سر آمد بزم معنی کے
تواضع نئیں ہے جس میں اس کو انساں کر نئیں گنتے

ولیؔ راہِ محبت میںمقدم وفاداری ہے
میں اس کوں اہل ایماں کر نئیں گنتے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!