Maharashtra State Eligibility Test (MH-SET)UGC NET URDUUrdu Ghazal

کلیات ولی سے شامل نصاب غزلیں

کلیات ولی سے شامل نصاب غزلیں

ردیف الف، ب اور ی / ے کی ابتدائی پانچ پانچ غزلیں

 

ردیف’’ الف ‘‘

1

کیتا ہوں ترے نانوں کو میں ورد زباں کا
کیتا ہوں ترے شکر عنوان بیاں کا

جس گرد اُپر پانوں رکھیں تیرے رسولاں
اس گرد کوں میں کحل کروں دیدۂ جاں کا

مجھ صدق طرف عدل سوں اے اہلِ حیا دیکھ
تجھ علم کے چہرے پہ نئیں رنگ گماں کا

ہر ذرۂ عالم میں ہے خور شید حقیقی
یوں بوجھ کے بلبل ہوں ہر اک غنچہ دہاں کا

کیا سہم ہے آفات قیامت ستی اس کوں
کھایا ہے جو کئی تیر تجھ ابرو کی کماں کا

جاری ہوئے آنجھو مرے یو سبزۂ خط دیکھ
اے خضر قدم! سیر کر اس آبِ رواں کا

کہتا ہے ولیؔ دل ستی یوں مصرع رنگیں
ہے یاد تری مجھ کوں سبب راحتِ جاں کا

 

2

وہ صنم جب سوں بسا دیدۂ حیران میں آ
آتش عشق پڑی عقل کے سامان میں آ

ناز دیتا نئیں گر رخصتِ گل گشت چمن
اے چمن زار حیا دل کے گلستان میں آ

عیش ہے عیش کہ اس مہ کا خیال روشن
شمع روشن کیا مجھ دل کے شبستان میں آ

یاد آتا ہے مجھے جب ود گل باغ وفا
اشک کرتے ہیںمکاں گوشۂ دامان میں آ

موج بے تابی دل اشک میں ہوئی جلوہ نما
جب بسی زلف صنم طبع پریشان میں آ

نالہ و آہ کی تفصیل نہ پوچھو مجھ سوں
دفتر درد بسا عشق کے دیوان میں آ

پنجۂ عشق نے بے تاب کیا جب سوں مجھے
چاک دل تب سوں بسا چاک گریباں میں آ

دیکھ اے اہلِ نظر سبزۂ خط میں لب لعل
رنگ یاقوت چھپا ہے خط ریحان میں آ

حسن تھا پردۂ تجریدمیں سب سوں آزاد
طالب عشق ہواصورت انسان میں آ

شیخ یاں بات تری پیش نہ جاوے ہر گز
عقل کوں چھوڑکے مت مجلس رندان میں آ

درد منداں کو بجز درد نئیں صید مراد
اے شہ ملک جنوں غم کے بیابان میں آ

حاکم وقت ہے تجھ گھر میں رقیب بدخو
دیو مختار ہوا ملک سلیمان میں آ

چشمۂ آب بقا جگ میں کیا ہے حاصل
یوسف حسن ترے چاہ ِ زنخدان میں آ

جگ کے خوباں کا نمک ہو کے نمک پر وردہ
چھپ رہا آکے ترے لب کے نمکدان میں آ

بسکہ مجھ حال سوں ہمسر ہے پریشانی میں
درد کہتی ہے میرا زلف ترے کان میں آ

غم سوں تیر ے ہے ترحم کا محل حال ولیؔ
ظلم کو چھوڑ سجن شیوۂ احسان میں آ

 

3

اے گل عذا ر غنچہ دہن ٹک چمن میں آ
گل سر پر رکھ کے شمع نمن انجمن میں آ

جیوں طفل اشک بھاگ نکو مجھ نظرستی
اے نور چشم نور نمط مجھ نین میں آ

کب لگ اپس کے غنچۂ مکھ کو رکھے گابند
اے نو بہار باغ محبت سخن میں آ

تا گل کے رو سے رنگ اڑے اوس کی نمن
اے آفتابِ حسن ٹک یک تو چمن میں آ

تجھ عشق سوں کیا ولیؔ دل کوں بیت غم
سرعت ستی اے معنیِ بے گانہ من میں آ

 

4

 

وہ نازنیں ادا میں اعجاز ہے سراپا
خوبی میں گل رخاں سوں ممتاز ہے سراپا

اے شوخ تجھ نین میں دیکھا نگاہ کرکر
عاشق کے مارنے کا انداز ہے سراپا

جگ کے ادا شناساں ہے جن کی فکر عالی
تجھ قد کوں دیکھ بولے یو ناز ہے سراپا

کیوں ہو سکیں جگت کے دلبر ترے برابر
تو حسن ہور ادا میں اعجاز ہے سراپا

گاہے اے عیسوی دم یک بات لطف سوں کر
جاں بخش مجھ کو تیرا آواز ہے سراپا

مجھ پر ولیؔ ہمیشہ دل دار مہرباں ہے
ہر چند حسب ظاہر طنّاز ہے سراپا

 

5

 

کتاب الحسن کا یہ مکھ صفا تیرا صفا دستا
ترے ابرو کے دو مصرع سوں اس کا ابتدا دستا

ترا مکھ حسن کا دریا و موجاں چین پیشانی
اُپر ابرو کی کشتی کے یوں تل جیو ں نا خدا دستا

ترے لب ہیں بہ رنگ حوض کوثر مخزن خوبی
یہ خال عنبریں تس پر بلال آسا کھڑا دستا

اشارات ِ آنکھیاں سوں گرچہ ہوں بیمار میں لیکن
ترے لب اسے مسیح وقت قانون شفا دستا

ہوا جو گوہر دل غرق بحر حسن، ہے نایاب
زبس دریائے حسنِ دلبراں بے انتہا دستا

بیاں اس کی نزاکت ہور لطافت کا لکھوں تاکے
سراپا محشر خوبی منیں ناز و ادا دستا

یو خط کا حاشیہ گرچہ ولیؔ ہے مختصر لیکن
مطوّل کے معانی کا تمامی مدّعا دستا

 

ردیف’’ ب‘‘

 

1

ترے جلوے سوں اے ماہِ جہاں تاب
ہوا دل سر بسر دریاے سیماب

ترے مکھ کے سُرج کوں دیکھ جیوں برف
ہوئے ہیں عاشقاں سر تاقدم آب

رکھوں جس خواب میں تجھ لب اُپر لب
مجھے شکر سوں شیریں تر ہے وہ خواب

تری نیناں وو قاتل ہیں کہ جن پاس
دو ابرو کی ہیں دو تیغ سیہ تاب

ولیؔ تجھ سوز میں اے آتشیں خو
سراپا ہے بہ رنگ شعلۂ بے تاب

 

2

 

کیوں ہو سکے جہاں میں تراہم سر آفتاب
تجھ حسن کی اگن کا ہے یک اخگر آفتاب

دیکھا جو تجھ کوں آپ سوں روشن جگت منیں
شرموں لیا نقاب زریں مکھ پر آفتاب

آیا ہے نقل لینے ترے مکھ کتاب کی
تار خطوط سیتی بنا مسطر آفتاب

گرمی سوں بے قرار ہونکلیا سِنے کوں کھول
تجھ عشق کا پیا ہے مگر ساغر آفتاب

ہندو سُرج کوں دور سوں نت پوجتے ولے
ہندوے زلف کے ہے بغل بھیتر آفتاب

جن نے ترے جمال پہ کیتا ہے یک نظر
دیکھا نئیںووپھر کے نظر بھر کر آفتاب

پوجا کوں تجھ درس کی ہوجو گی فلک اُپر
نکلیا ہے پہن جامۂ خاکستر آفتاب

تجھ مکھ کے آفتاب اُپر گر کرے نگاہ
پنہاں ہو ہر نظر ستی جیوں اختر آفتاب

جگ میں ولیؔ سو کس کوں برابر کہے ترے
ذرّے سوں ہے نزدیک ترے کمتر آفتاب

 

3

 

ترے مکھ پر اے نازنیں یو نقاب
جھلکتا ہے جیوں مطلعِ آفتاب

ادا فہم کے دل کی تسخیر کوں
ترا قد ہے جیوں مصرعِ انتخاب

بجا ہے ترے حسن کے تاب سوں
تری زلف کھاتی ہے گر پیچ و تاب

نظر کر کے تجھ مکھ کی صافی اُپر
ہوئی شرم سوں آرسی غرقِ آب

ترے عکس پڑنے سوں اے گل بدن
عجب نئیں اگر آپ ہووے گلاب

ترے وصل میں اس قدر ہے نشاط
کہ مخمل کوں آئے ہے سوں راحت خراب

کریں بخت میرے اگر ٹک مدد
ولیؔ اس سجن سوں ملوں بے حجاب

 

4

 

جب سوں وو نازنیںکی میں دیکھا ہوں چھب عجب
دل میں مرے خیال ہیں تب سوں عجب عجب

جاتا ہے دن تمام اسی مکھ کی یاد میں
ہوتا ہے فکر زلف میں احوال شب عجب

بے تاب ہو کے مثل گدایاں نزدیک جا
بے باک ہو کے تب یوکیا میں طلب عجب

دو نین سو ں ترے ہے دو بادام کا سوال
سن یو سوال دل میں رہا پستہ لب عجب

بولیا مری نگاہ کی قیمت ہے دوجہاں
جس دیکھنے سوں دل میں ترے ہے طرب عجب

اس دولتِ عظیم کو ں یوں مفت مانگنا
لگتی ہے بات مجکو تری بے ادب عجب

اوّل تو شوخ آکے غضب میں غصہ کیا
سر تا قدم وہ ناز اٹھا یو غضب عجب

اس شعر کی طرح نکالا ہے جب ولیؔ
یو اختراع سن کے رہے دل میں سب عجب

 

5

 

ملیا و ہ گل بدن جس کو ں اُسے گلشن سوں کیا مطلب
جو پایا وصل یوسف اس کوں پیراہن سوں کیا مطلب

مجھے اسباب خود بینی سوں دائم عکس ہے دل میں
کیا جو ترک زینت کوں اسے درپن سوں کیا مطلب

سخن ، صاحب سخن کے سن کے ملنے کی ہوس مت کر
جواہرجب ہوئے حاصل تو پھر معدن سوں کیا مطلب

ؑعزیزاں باغ میں جانا نپٹ دشوار ہے مجھ کوں
گلی گل رو کی پایا ہوں مجھے گلشن سوں کیا مطلب

ولیؔ جنت منیں رہنا نئیں درکار عاشق کوں
جو طالب لامکاں کا ہے اسے مسکن سوں کیا مطلب

 

ردیف’’ ی‘‘

1

منگا کے پی کوں لکھوں میں اپس کی بے تابی
لیا نین کی سفیدی سوں کاغذآبی

لکھا پلک کے قلم سوں میں اے کماں ابرو
جگر کے خون سوں تجھ تیغ کی سیہ تابی

ہوا ہے جب سو ں وو نور نظر انکھاں سوں جدا
نہیں نظر میں مری تب سوں غیر بے خوابی

نگہ کے جھاڑ کا پھل تو ہے اے بہار کرم
ترے جمال کے گلشن میںنت ہے سیرابی

ولیؔ خیال میں اس مہ کوں جو کوئی کہ رکھے
تو خواب میں نہ دے اس کو غیر مہتابی

2

آیا وہ شوخ باندھ کے خنجر کمر ستی
عالم کوں قتل عام کیا اک نظر ستی

طاقت رہے نہ بات کی پھر انفعال سوں
تشبیہہ تجھ لباں کوں اگر دوں شکر ستی

غم نے لیا ہے تب سوں مجھے پیچ و تاب میں
باندھا ہے جب سوں جیوکوں اس مو کمر ستی

غم کے چمن کو باد خزاں کا نہیں ہے خوف
پہنچا ہے اس کوں آب مری چشم تر ستی

یک بار جا کے دیکھ ولیؔ اس دسن کے تئیں
لکھتا ہوں جس کے وصف کوں آب گہر ستی

 

3

اس سوں رکھتا ہوں خیالِ دوستی
جس کے چہرے پر ہے خال دوستی

خشک لب وو کیوں رہے عالم منیں
جس کو حاصل ہے زلال دوستی

شمع بزم اہل معنی کیوں نہ ہوئے
جس اُپر روشن ہے حال دوستی

اس سخن سوں آشنا ہے درد مند
درد ِدوری ہے وبال دوستی

اے سجن تجھ مکھ کے مصحف میں مجھے
دیکھنا بر جا ہے قال دوستی

فیض سوں تجھ قد کے اے رنگیں بہار
تازہ و تر ہے نہال دوستی

اے ولیؔ ہر آن کر مشک وفا
ہے وفاداری کمال دوستی

 

4

جوکُئی ہر رنگ میں اپنے کو شامل کر نئیں گنتے
ہمن سب عاقلاں میں اس کو ں عاقل کر نئیں گنتے

مدرس مدرسے میں گر نہ بولے درس درشن کا
تو اس کوں عاشقاں استاد کامل کر نئیں گنتے

خیال خام کوں جو کئی کہ دھووے صفحہ ٔ دل سوں
تصوف کے مطالب کوں وو مشکل کر نئیں گنتے

جو بسمل نئیں ہوا تیری نین کی تیغ سوں بسمل
شہیداں جگ کے اُس بسمل کوں بسمل کر نئیں گنتے

پرت کے پنتھ میں جو کئی سفر کرتے ہیں رات ہور دن
وو دنیا کوں بغیر از چاہ بابل کر نئیں گنتے

نہیں جس دل میں پی کی یاد کی گرمی کی بے تابی
تو ویسے دل کوں سارے دلبراںدل کر نئیں گنتے

رہے محروم تیری زلف کے مہرے سوں وو دائم
جوکُئی تیری نین کو ں زہر قاتل کر نئیں گنتے

نہ پاوے وو دنیا میں لذت دیوانگی ہر گز
جو تجھ زلفاں کے حلقے کوں سلاسل کر نئیں گنتے

بغیر از معرفت سب بات میں گر گئی اچھے کامل
ولیؔ سب اہل عرفاں اس کوں کامل کر نئیں گنتے

بزرگاں کن جو کئی آپس کوں ناداں کر نئیں گنتے
سخن کے آشنا اُن کوں سخن داں کر نئیں گنتے

طریقہ عشق بازاں کا عجب نادر طریقہ ہے
جو کئی عا شق نئیں اس کو ں مسلماں کر نئیں گنتے

گریباں جو ہوا نئیں چاک بے تابی کے ہاتھوں سوں
گلے کا دام ہے اس کوں گریباں کر نئیں گنتے

عجب کچھ بوجھ رکھتے ہیں سر آمد بزم معنی کے
تواضع نئیں ہے جس میں اس کو انساں کر نئیں گنتے

ولیؔ راہِ محبت میںمقدم وفاداری ہے
میں اس کوں اہل ایماں کر نئیں گنتے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Check Also
Close
Back to top button
error: Content is protected !!