Maharashtra State Eligibility Test (MH-SET)UGC NET URDUUrdu Ghazal

کلیات ولی سے ردیف ب کی شامل نصاب غزلیں

Wali Deccani Ki Radeef B Ki Ghazlen

کلیات ولی سے شامل نصاب ردیف’’ ب ‘‘ کی غزلیں

1

ترے جلوے سوں اے ماہِ جہاں تاب
ہوا دل سر بسر دریاے سیماب

ترے مکھ کے سُرج کوں دیکھ جیوں برف
ہوئے ہیں عاشقاں سر تاقدم آب

رکھوں جس خواب میں تجھ لب اُپر لب
مجھے شکر سوں شیریں تر ہے وہ خواب

تری نیناں وو قاتل ہیں کہ جن پاس
دو ابرو کی ہیں دو تیغ سیہ تاب

ولیؔ تجھ سوز میں اے آتشیں خو
سراپا ہے بہ رنگ شعلۂ بے تاب

2

کیوں ہو سکے جہاں میں تراہم سر آفتاب
تجھ حسن کی اگن کا ہے یک اخگر آفتاب

دیکھا جو تجھ کوں آپ سوں روشن جگت منیں
شرموں لیا نقاب زریں مکھ پر آفتاب

آیا ہے نقل لینے ترے مکھ کتاب کی
تار خطوط سیتی بنا مسطر آفتاب

گرمی سوں بے قرار ہونکلیا سِنے کوں کھول
تجھ عشق کا پیا ہے مگر ساغر آفتاب

ہندو سُرج کوں دور سوں نت پوجتے ولے
ہندوے زلف کے ہے بغل بھیتر آفتاب

جن نے ترے جمال پہ کیتا ہے یک نظر
دیکھا نئیںووپھر کے نظر بھر کر آفتاب

پوجا کوں تجھ درس کی ہوجو گی فلک اُپر
نکلیا ہے پہن جامۂ خاکستر آفتاب

تجھ مکھ کے آفتاب اُپر گر کرے نگاہ
پنہاں ہو ہر نظر ستی جیوں اختر آفتاب

جگ میں ولیؔ سو کس کوں برابر کہے ترے
ذرّے سوں ہے نزدیک ترے کمتر آفتاب

3

ترے مکھ پر اے نازنیں یو نقاب
جھلکتا ہے جیوں مطلعِ آفتاب

ادا فہم کے دل کی تسخیر کوں
ترا قد ہے جیوں مصرعِ انتخاب

بجا ہے ترے حسن کے تاب سوں
تری زلف کھاتی ہے گر پیچ و تاب

نظر کر کے تجھ مکھ کی صافی اُپر
ہوئی شرم سوں آرسی غرقِ آب

ترے عکس پڑنے سوں اے گل بدن
عجب نئیں اگر آپ ہووے گلاب

ترے وصل میں اس قدر ہے نشاط
کہ مخمل کوں آئے ہے سوں راحت خراب

کریں بخت میرے اگر ٹک مدد
ولیؔ اس سجن سوں ملوں بے حجاب

4

جب سوں وو نازنیںکی میں دیکھا ہوں چھب عجب
دل میں مرے خیال ہیں تب سوں عجب عجب

جاتا ہے دن تمام اسی مکھ کی یاد میں
ہوتا ہے فکر زلف میں احوال شب عجب

بے تاب ہو کے مثل گدایاں نزدیک جا
بے باک ہو کے تب یوکیا میں طلب عجب

دو نین سو ں ترے ہے دو بادام کا سوال
سن یو سوال دل میں رہا پستہ لب عجب

بولیا مری نگاہ کی قیمت ہے دوجہاں
جس دیکھنے سوں دل میں ترے ہے طرب عجب

اس دولتِ عظیم کو ں یوں مفت مانگنا
لگتی ہے بات مجکو تری بے ادب عجب

اوّل تو شوخ آکے غضب میں غصہ کیا
سر تا قدم وہ ناز اٹھا یو غضب عجب

اس شعر کی طرح نکالا ہے جب ولیؔ
یو اختراع سن کے رہے دل میں سب عجب

5

ملیا و ہ گل بدن جس کو ں اُسے گلشن سوں کیا مطلب
جو پایا وصل یوسف اس کوں پیراہن سوں کیا مطلب

مجھے اسباب خود بینی سوں دائم عکس ہے دل میں
کیا جو ترک زینت کوں اسے درپن سوں کیا مطلب

سخن ، صاحب سخن کے سن کے ملنے کی ہوس مت کر
جواہرجب ہوئے حاصل تو پھر معدن سوں کیا مطلب

ؑعزیزاں باغ میں جانا نپٹ دشوار ہے مجھ کوں
گلی گل رو کی پایا ہوں مجھے گلشن سوں کیا مطلب

ولیؔ جنت منیں رہنا نئیں درکار عاشق کوں
جو طالب لامکاں کا ہے اسے مسکن سوں کیا مطلب

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Check Also
Close
Back to top button
error: Content is protected !!